articles

Comment by Sheikh Sajjad ur Rehman about Chaudhry Nisar Ali Khan and Ghulam Sarwar Khan

چوہدری نثار علی خان اور غلام سرور خان کے متعلق شیخ ساجد الرحمٰن کے بیان پر تبصرہ

چوہدری نثار علی خان اور غلام سرور خان کے متعلق شیخ ساجد الرحمٰن کے بیان پر تبصرہ
چک بیلی خان سے مسعود جیلانی

اخبار میں سابق ضلعی چیئر مین زکوٰۃ و عشر کمیٹی ضلع راولپنڈی کی جانب سے چوہدری نثار علی خان اور غلام سرور خان کے متعلق بیان پڑھا بیان میں شیخ ساجد الرحمٰن نے کہا کہ اقتدار کی ہر دکان پر سجدہ دینے والے غلام سرور خان چوہدری نثار کو مشورہ دیتے اچھے نہیں لگتے شیخ ساجد سابق چئیر مین ضلعی زکو ٰۃ و عشر کمیٹی تھے زکو ٰۃ دینا ارکان اسلام میں سے ایک اہم رکن ہے اور شیخ ساجد کے ذمہ یہ حکومتی و شرعی ڈیوٹی تھی کہ وہ عوام کی جانب سے اکٹھی گئی زکو ٰۃ کو پوری دیانتداری کے ساتھ اس کے حقداروں تک پہنچائیں انہوں نے کہاں تک یہ ڈیوٹی دیانتداری کے ساتھ سرانجام دی یہ تو وہ خود یا خدا بہتر جانتا ہے البتہ اس بیان سے لگتا ہے کہ وہ زکو ٰۃ بانٹنے والے ایک ذمہ دار سے زیادہ چوہدری نثار علی خان کے وفادار اور بہترین دفاع کرنے والے کارکن کا فریضہ سرانجام دے رہے ہیں جہاں تک سیاسی قد کا تعلق ہے ووٹ اس کا بہتر ین پیمانہ ہے حلقہ این اے59اورحلقہ این اے63کے عوام نے سیاسی قد کا بہترین تعین کر بھی دیا ہے لہٰذا س پر عوام کی زکو ٰۃ بانٹنے والے شخص کے تبصرہ کی کوئی ضرورت نہیں بنتی ووٹ دینے والے لوگوں کو پتا تھا کہ جو لوگ ان کے سامنے ہیں وہ ان کے حلقہ سے ہیں اور ووٹ دینے کے قابل کون ہے کیا وہ پارٹیاں بدلنے والا شخص ہے یا نہ بد لنے والا ۔بلکہ جس نے پارٹیاں نہیں بدلیں اس کے لئے پارٹیوں نے خود داخلے کے دروازے بند کر دئیے اور سہار ا لینے کے لئے جب انہوں نے خلائی مخلوق پارٹی سے تعلق ظاہر کرنے کے لئے جیپ کا نشان لیا تو اس سے بھی کچھ نہ ملا اور اب وہ الزام لگا رہے ہیں کہ وہ ہارے نہیں بلکہ انھیں ہرایا گیا ہے ہم یہ بات مانتے ہیں کہ انھیں ہرایا گیا ہے مگر کسی اور نے نہیں عوام نے انھیں ہرایا ہے چوہدری نثار علی خان صاحب کو ایک ایماندار سیاستدان کہا جاتا ہے مگر ان کی ایمانداری پرانگلی اٹھانے والوں کے لئے شیخ ساجد کا چوہدری نثار کے لئے دیا گیا بیان ایک با وزن گواہی ہے جویہ واضع کر رہا ہے کہ چوہدری صاحب ایماندار نہیں بلکہ لوگوں کو نوازنے والے سیاستدان ہیں جو نوازنے کے بعد اس کا صلہ حاصل کرتے ہیں جیسا کہ شیخ ساجد صاحب کی مثال ہمارے سامنے آئی ہے یہاں میں ایک اور مثال بھی پیش کر دوں کہ پاپین بنگلہ چک بیلی خان میں چوہدری صاحب کی کھلی کچہری تھی میں بھی وہاں موجود تھا چوہدری نثار صاحب نے وہاں سابق ضلعی چیئر مین زکو ٰۃ و عشر کمیٹی چوہدری عجب حسین کی طرف اشارہ کرتے ہوئے لوگوں سے کہا کہ آپ بطور ووٹر، سپورٹر یا اخبار کے ذریعے میری مدد کریں میں بھی اس طر ح آپ کو مقام دوں گا جیسے اس جوان یعنی چوہدری عجب حسین کو دیا ہے میں بھی چاہتا تو چوہدری صاحب کی اخباری مدد کر کے اور اپنے پیشہ سے بد دیانتی کر کے ضلعی زکو ٰۃ عشر کمیٹی کی سربراہی جیسامقام لے کر دنیا میں بلند مرتبہ نظر آتا لیکن مجھے حضرت عبداللہ بن عمرؓ کا وہ واقعہ یاد آ گیا کہ جب وہ قوم کے سربراہ بنے تو انھوں نے اپنا ریشمی چغہ بھی بیچ دیا کہ کہیں مجھے اس کا حساب بھی نہ دینا پڑ جائے شیخ ساجد صاحب کو ضلع میں زکو ٰۃ بانٹنے کا سربراہ بنایا گیا تھا یہ اللہ کی طرف سے بہت بڑی آزمائش تھی کیونکہ زکو ٰۃ ارکان اسلام میں سے ایک ہے اس میں شیخ ساجد صاحب غور کریں کہ کہیں کوئی کوتاہی تو نہیں رہ گئی جس پرانھیں خدانخواستہ خدا کی گرفت کا سامنا نہ کرنا پڑ جائے بجائے اس کے کہ وہ چوہدری نثار صاحب کی مدح سرائی میں چوہدری نثار علی خان اور غلام سرور خان کا سیاسی قد ناپنا شروع کر دیں یہ دونوں شخصیات عوام میں جاتی ہیں اور عوام انھیں بڑے بہتر طریقے سے ان کا قد ناپ کر دکھائیں گے ویسے بھی چوہدری صاحب کے ہارنے کے بعد اکثر لوگ یہی کہتے ہیں کہ چوہدری صاحب کو ہرانے میں ان کے ارد گرد بیٹھے شیخوں کا زیادہ کردار ہے اب ایسے شیخ کون ہیں وہ ڈھونڈنے میں شاید ہمیں زیادہ محنت نہیں کرنا پڑے گی

Show More

Related Articles

Check Also

Close