UKHeadlineDailyNews

London; Barrister Zain Malik first British Pakistani to be appointed Immigration Judge

برٹش پاکستانی بیرسٹر زین ملک امیگریشن جج اور ڈپٹی ڈسٹرکٹ جج تعینات

کشمیر میں پیدا ہونے اور برطانیہ کی اعلیٰ عدالتوں میں حقوق انسانی اور امیگریشن کے متعدد مقدمات جیتنے والے ایک نامور برٹش پاکستانی بیرسٹر زین ملک کو امیگریشن جج اور ڈپٹی ڈسٹرکٹ جج تعینات کیاگیا ہے، لندن ہائیکورٹ کے ذرائع نے تصدیق کی ہے کہ زین ملک کو پہلے مرحلے کے ٹریبونل کاجج مقرر کیا گیا ہے۔ 32سالہ زین ملک آزادکشمیر میں پیدا ہوئے، وہ امیگریشن کے معروف وکیل ڈاکٹر ملک اکبر کے صاحبزادے ہیں۔ انھوں نے اسلام آباد میں اے لیول تک تعلیم حاصل کی، بعد ازاں وہ برطانیہ چلے آئے، جہاں انھوں نے ایسٹ لندن یونیورسٹی سے قانون میں گریجویشن کیا۔ انھوں نے لنکن ان سے بار ایٹ لا کی تعلیم حاصل کی اور لنکن ان سے ہی بیرسٹر کی حیثیت سے پریکٹس شروع کی۔ پورے انگلینڈ میں چند ہی پاکستانی وکلا جج کے طور پر خدمات انجام دے رہے ہیں لیکن زین ملک آزادکشمیر میں پیدا ہونے والے پہلے جج ہیں۔ زین ملک نے عدالتوں میں ہائی پروفائل مقدمات جیتے۔

LONDON: A leading British Pakistani barrister who rose to fame winning a record number of human rights and immigration law cases in Britain’s higher courts has been appointed as Immigration Judge and also as Deputy District Judge.

London High Court sources confirmed that Zane Malik has become judge of the First Tier Tribunal. Zane Malik, 32, was born in Azad Kashmir and studied in Islamabad for A Levels. He moved to the UK and studied at East London University for his law graduation. He studied bar at the Lincoln’s Inn and started practicing as a barrister at 12 Old Square, Lincoln’s Inn.

There are only few Pakistani-born lawyers working as judges in courts across England but Zane Malik becomes the first judge who was born in Azad Kashmir and studied in Islamabad till completing his A levels before coming to the UK for graduation in law and to join his father’s practice.

Show More

Related Articles

Back to top button
Close